Wednesday, 13 November 2019
/ غزل / حماد حسن / پھر رواں ھے تری جانب کوئی سیلاب نگر

پھر رواں ھے تری جانب کوئی سیلاب نگر

پھر رواں ھے تری جانب کوئی سیلاب نگر
نیند سے جا گ مرے خواب نگر خواب نگر

میں نے جب کھولے تھے لنگر تو وہ فرحاں آباد
اور جب لوٹ کے پلٹا تو تهہ آب نگر

اے مرے شھر جنوں اے مری بے خواب گلیوں
اے مرے دیدہ تر اے مرے خونباب نگر

اک ذرا دھوپ میں اگلے گا کہانی ساری
ظلمت شب میں ٹھٹرتا ہوا برفاب نگر

مرے مدفون خزانے مری گم گشتہ حیات
ڈھونڈ نے کوئی تو آۓ مرا غرقاب نگر