سراب

Aamir Zahoor

سب کچھ سراب ہے پیارے۔۔عہدِ وفا کے قصے یہ جھوٹی وصل کی باتیں ہیں پندار، بھرم سب کچھسراب ہے پیارےیہ جو ہم اور تم اقرار کرتے ہیں ایک دوسرے سے پیار کرتے ہیں سب شعبد

مزید »

آؤ اس شہر تمنا میں چلیں

Aamir Zahoor

آؤ اس شہر تمنا میں چلیںجہاں اداسیوں کاگمان نہ گزرےایسا شہر جس کےدرو دیواروصالِ یار کے نغمےگنگناتے ہوںجس کی فصیلوں پرآشنائی کے پرچم لہراتے ہوںآؤ اس شہر تمنا میں

مزید »

میں وی انسان آں

Zohaib Hassan

میں وی انسان آں مینڈا کوئی مذہب نہی مینڈی کوئی جنس نہی میں غریب وی نہی امیر وی نہیں میں انسان آں میں بھکا وی آں ماں سردی وی لگنی مینڈے کپڑے وی پاٹے ون

مزید »

گئی چَوّنی دھیلے مُکے

Aamir Zahoor

گئی چَوّنی دھیلے مُکے اوہ ہٹیاں تے ٹھیلے مُکے کی وساکھی سَاون بَھادوں موجاں مُکیاں ، میلے مُکے پِٹُھو گَرم تے گلُی ڈنڈا سب بچپن دے کھیلے مُکے مُکیاں ڈاراں

مزید »

رستی ہوئی سسکیاں!

Khalid Zahid

بند دروازوں اور کھڑکیوں سے رستی ہوئی سسکیاںیہاں سیکڑوں میل دور سماعتوں پر دستک دے رہی ہیںسسکیاں جب شور کی صورت اختیار کرلینگیتویہ سارے بند کھڑکیاں اور دروازے تو

مزید »

ماں

Shahid Kamal

مرا وجود مری روح میری جان ہے ماںغموں کی دھوپ میں خوشیوں کی سائبان ہے ماں مرے وجود کے لہجے میں گفتگو اس کیمری زمین تخیل پہ آسمان ہے ماں اسی کا لمس حقیقت ہے است

مزید »

کشمیر کا نوحہ

Khalid Zahid

چلو کشمیر دیکھتے ہیں، جنت نظیر دیکھتے ہیںموت کا رقص دیکھتے ہیں، خون کی ہولی دیکھتے ہیںہنستے مسکراتے چہرے چڑھتے سولی دیکھتے ہیںچیخوں میں سسکیوں کی صدائیں سنتے ہی

مزید »

عفریت

Hammad Hassan

وھاں میں دیکھ آیا تھا گلابی موسموں کی دھوپ کا آنچلجو پائن کے درختوں میں الجھتا تھاتو ہر سو شام کی پریاں سر دھلیز شب ان کا نظارہ دیکھنے رکتیںکہاس منظرکو آگے منتق

مزید »

حکم نامہ

Hammad Hassan

سو اب یہ حکم آیا ھےکہ اس بے فیض موسمبے اماں صحرا میں رھنا ھےسلگتی دھوپ اور بنجر پہاڑوں کوشبستاں کی طرحجنت کی مانند ھی سمجھناھےکمیں گاھوں میں بیٹھے قاتلوںکو بھی

مزید »

دسمبر اب کے آؤ تو

Fakhira Batool

دسمبر اب کے آؤ تو،  تم اُس شہرِ تمنا کی خبر لانا کہ جس میں جگنوؤں کی کہکشائیں جھلملاتی ہیں جہاں تتلی کے رنگوں سے فضائیں مسکراتی ہیں وہاں چاروں طرف خوشب

مزید »