Thursday, 17 October 2019
/ نظم / عامر ظہور سرگانہ / گئی چَوّنی دھیلے مُکے

گئی چَوّنی دھیلے مُکے

گئی چَوّنی دھیلے مُکے

اوہ ہٹیاں تے ٹھیلے مُکے

کی وساکھی سَاون بَھادوں

موجاں مُکیاں ، میلے مُکے

پِٹُھو گَرم تے گلُی ڈنڈا

سب بچپن دے کھیلے مُکے

مُکیاں ڈاراں پَنچھی مُکے

چنَگے سی جو وَیلے مُکے

مُک گئی بیٹھک نویں سیاپے

سب بیٹھے یار کَویلے مُکے

دودھ وی مُکیا مُکی لسی

چانن بھرے سَویلے مُکے

مُکی شہتوتاں آلی چَھاں

کھوہ دوارے کَیلے مُکے

گیاں فصلاں پَیا پواڑہ

ڈنگراں بھرے طَبیلے مُکے

سنگت وسیب آنڈ گوانڈ

سب سجن البیلے مُکے

رونق جناں دم سی عامر

رَاوی سَتلُج دے بَیلے مُکے

عامر ظہور سرگانہ

عامر ظہور سرگانہ کا تعلق گوجرہ سے ہے اور جی سی یونیورسٹی فیصل آباد  سے ایم اے صحافت کر رہے ہیں۔ وہ ایک شاعر، لکھاری ، کالم نگار، مترجم اورسپیکر  ہیں۔ عامر اشفاق احمد مرحوم ، سید قاسم علی شاہ، آفتاب اقبال، جاوید چودھری اورعاشق حسین کوکب مرحوم کو اپنا ناصح مانتے ہیں۔