1. ہوم/
  2. نوحہ/
  3. فاخرہ بتول/
  4. داستاں ظُلم کی جب تُو نے سُنائی زھرا ع

داستاں ظُلم کی جب تُو نے سُنائی زھرا ع

داستاں ظُلم کی جب تُو نے سُنائی زھرا ع  

مچ گئ چاروں طرف ایک دُہائی زھرا ع 

تُو خفا جس سے ھے اُس سے ھےمحمٌد(ص)بھی خفا 

بات اُمٌت کی سمجھ میں نہیں آئی زھرا ع

ترے بابا کی سند پُرزوں میں تقسیم ہوئی

بزم غاصب نے کچھ اِس طرح سجائی زھرا ع

یہ تو محبوبِ خُدا ھے، یہ ھے نبیوں کا نبی 

جس کی تحریر کو تُو آج ھے لائی زھرا ع ؟

تین سو سے بھی زیادہ تھے مسلمان وہاں

کس نے دی بول، ترے حق میں گواہی زھرا ع ؟

رُک کے جس در پہ محمٌد(ص) نے اجازت مانگی

آگ اُس در پہ بتا کس نے لگائی زھراع ؟

در ِخیبر کو اُٹھایا تھا علی ع مولا مگر

کس طرح جلتے ہوئے در سے ھے اُٹھائی زھرا ع ؟

ترا مُحسن ع تجھے بھُولے بھی تو بھُولے کیسے؟

وہ تری گود کی معصوم کمائی زھرا ع

اِس قدر جلد مُسلمان بھُلا بیٹھے تُجھے ؟

تُو محمٌد(ص) کی، خدیجہ ع کی ھے جائی زھرا ع

وہ نصاریٰ تھے نہ ہندو تھے نہ تھے آلِ یہود

ھے مُسلمانوں کے ہاتھوں کی ستائی زھرا ع

وہ محمٌد(ص) کی ھے بیٹی، یہ ھے دربار بتول!

یہ ادب سے کہا کس نے کہ وہ آئی زھرا ع ؟



فاخرہ بتول

فاخرہ بتول نقوی ایک بہترین شاعرہ ہیں جن کا زمانہ معترف ہے۔ فاخرہ بتول نے مجازی اور مذہبی شاعری میں اپنا خصوصی مقام حاصل کیا ہے جو بہت کم لوگوں کو نصیب ہوتا ہے۔ فاخرہ بتول کی 18 کتب زیور اشاعت سے آراستہ ہو چکی ہیں جو انکی انتھک محنت اور شاعری سے عشق کو واضح کرتا ہے۔ فاخرہ بتول کو شاعری اور ادب میں بہترین کارکردگی پر 6 انٹرنیشنل ایوارڈز مل چکے ہیں۔