/ کالمز / پیرزادہ شرف عالم / کثافت کا رستہ، لطافت کی منزل

کثافت کا رستہ، لطافت کی منزل

میں : آج کچھ گہری سوچ میں ہو
وہ : میں کئی دنوں سے انسان کے وجود پہ غور کررہا ہوں
کہ آخر انسان میں بیک وقت دو انتہائیں کیسے سماسکتی ہیں
ایک طرف اس روئے زمین پرانسانوں کے ایسے ایسے رُوپ ہیں
کہ جن کے شر سے دنیا پناہ مانگتی ہے
تو دوسری طرف سچائی اورعمل کے وہ روشن کردار ہیں جن
کی وجہ سےانسانیت خود پرنازاں ہے
میں: تو کسی نتیجے پہ پہنچے؟
وہ : ہاں کئی عُقدے کھلے، سوچ کے کئی در وا ہوئے
میں : اچھا تو کچھ مجھے بھی بتاؤ کیوں کہ بقول سقراط
"میں اتنا جانتا ہوں کہ میں کچھ نہیں جانتا"
وہ : یہ سن کر خوشی ہوئی کہ تمھارے اندر کچھ جاننے کی جستجو ہے
کبھی اس پہلو پر غور کیا ہے کہ انسان کا سارا وجود سراپا کثافت ہے
دنیا میں آنے کے بعد گزرنے والے ہر لمحے کے ساتھ
انسان کثیف سے کثیف تر ہوتا چلا جاتا ہے،
تمام عمر اس کثافت کی پرورش کرتا ہے
اوراپنے دم آخر پر بھی اسے چھوڑنے پر آمادہ نہیں ہوتا
میں: لیکن میں نے ایسے بھی کچھ وجود دیکھے ہیں جو اپنے وجود کی
کثافت کے باوجود بھی اپنی لطافت پر کوئی حرف نہیں آنے دیتے
وہ : بات تو تم نے درست کی ہے
لیکن کیا کبھی اس پر بھی غور کیا ہے کہ انسان کے لیے لطافت
کیا ہے، اوراس کا وجود کسی لطیف احساس کا ادراک
کیسے کرتا ہے
میں : تم ہی کہو
وہ : دیکھو میرے دوست کثافت کا تعلق مادے سے ہے اور
لطافت کا روح سے، یعنی انسان کا جسم کثافت ہے
اور روح ایک لطیف احساس، دوسرے لفظوں میں اگر یہ کہاجائے
کہ روح اس کائنات کا سب سے لطیف مادہ ہے تو غلط نہ ہوگا
میں : تم یہ بات اتنے وثوق سے کیسے کہہ سکتے ہو
جبکہ سائنس اپنی تمام تر تحقیق کے بعد بھی
اس بات کو ماننے سے ابھی تک انکاری ہے
کہ روح کائنات کاسب سے لطیف مادہ ہے
وہ : ایسا نہیں ہے، جدید طبیعات اپنے تجربات کی روشنی میں
آج اس نتیجے پر پہنچنے کے بہت قریب ہے کہ
جہاں کسی مادے، روشنی اورہوا کا شائبہ تک نہ ہو
وہاں بھی کچھ نہ کچھ ضرور موجود ہوتا ہے
میں : لیکن تم بات کررہے تھے لطافت اورلطیف احساس کی
وہ : ہاں....لطیف احساس کا تعلق روح سے ہے
اور جسم کی مادی ضرورتیں، یعنی لباس، بھوک، پیاس وغیرہ
ہمیشہ کسی نہ کسی کثافت سے پوری ہوتی ہیں
مگر روح کی ضرورتیں قلبی سکون سے،
ہمدردی کے احساس سے، انصاف اورمساوات
سے پوری ہوتی ہیں
میں : لیکن روح امر ربی ہے
وہ : بے شک جب ہی وہ تمام صفات جو خالصتاً خداکی ذات سےمنسوب ہیں
وہ انسان سرانجام دے تو روح کی تسکین کا سامان بن جاتی ہیں
اور روح کی تسکین سے ہی زندگی کی لطافت ہے
میں : مجھے تو انسان کی زندگی کثافت اورلطافت کے مابین
ایک نا ختم ہونے والا تصادم لگتی ہے
وہ : تم نے بہت خوبصورت بات کہی
ہماری آج کی گفتگو کو ایک جملے میں سمودیا
حقیقت یہی ہے کہ لطافت کی منزل کاسفر
کثافت کے رستے پر چل کر ہی طے ہوتا ہے
اورنہ جانے کتنے مسافر اپنے وجود کی بہتیری کثافتوں کا بوجھ
اٹھا نہیں پاتے، منزل پر پہنچنے سے پہلے ہی رخت سفر کھول دیتے ہیں۔
میں : تم کس منزل کی بات کررہے ہو
وہ : میں نے کہا نا، لطافت کی منزل اوروہ ہے ابدی قیام کی جنت
جہاں انسان ہر اس کثافت سے آزاد ہوگاجس کا بوجھ اٹھانا
اس دنیا میں اس کی ضرورت بھی ہے اورمجبوری بھی
لیکن اگر وہ اپنی طبعی کثافتوں کے ساتھ گناہوں کی کثافتوں
سے بھی آلودہ ہوکر گرتا پڑتا اپنی منزل پر پہنچا تو پھر واپسی کا سفر ناممکن ہوگا
بقول شاعر
عجیب حبس شرف یوم آخرت کو ملا
میں لوٹ جاتا مگر راہِ واپسی نہ رہی
میں : کیا خوب کہا ہے لیکن میں نے اپنے بچپن میں ایک
ایک کہاوت پڑھی تھی، کہو تو سناؤں
وہ : کیوں نہیں
میں : ایک شخص جہنم کے دروازے پر کھڑا اندر کا احوال
جاننے کی کوشش میں تھا، جھانک کر دیکھاتو حیران
رہ گیا کہ یہ کیسی جہنم ہے جہاں کوئی آگ ہے نہ الاؤ،
ساتھ کھڑے شخص سے پوچھا تو اس نے جواب دیا
جہنم میں آگ کہاں یہاں تو ہرشخص اپنی آگ ساتھ
لیکر آتا ہے۔ جو اس کے گناہوں کی کثافت سے
دہکتی ہے۔