/ شاہد کمال / لبوں پہ پہلے درودو سلام آتا ہے

لبوں پہ پہلے درودو سلام آتا ہے

لبوں پہ پہلے درودو سلام آتا ہے

زباں پہ جب بھی محمد ؐ کا نام آتا ہے


اُسی کے نسبت فیض سخن کی برکت سے
گلوں میں رنگ صبا کو خرام آتا ہے

حریم شب میں وہی ڈھالتا ہے مہرو نجوم
اُسی کے نام پہ کوثر کا جام آتا ہے

یہ جبرئیل جو سردار ہے فرشتوں کا
نبیؐ کے در پہ بصد احترام آتا ہے

خدا کا شکر کہ اس در کی چاکری کے سوا
مجھے کہاں کوئی دنیا کا ،کام آتا ہے

شرف یہ کم تو نہیں آپ کے غلاموں کا
اگر کہیں تو جناں سے طعام آتا ہے

یہی وہ اسم محمدؐ ہے حرزجاں شاہدؔ
جو مشکلوں میں بہت اپنے کام آتا ہے